سحری اورافطاری کے ٹوٹکے

رمضان مسلمانوں کے لیے سال کا سب سے مقدس مہینہ ہے، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: “جب رمضان کا مہینہ شروع ہوتا ہے تو جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور جہنم کے دروازے بند کر دیے جاتے ہیں اور شیاطین کو زنجیروں میں جکڑ دیا جاتا ہے۔” رمضان کھانے پینے سے پرہیز کرنے سے کہیں زیادہ ہے۔ یہ روح کو پاک کرنے، خدا پر توجہ مرکوز کرنے، اور نظم و ضبط اور قربانی کی مشق کرنے کا وقت ہے۔ رمضان کے مہینے میں روزہ رکھنا، جسے صوم کہا جاتا ہے، اسلام کے ان پانچ ستونوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے جو مسلمان کی زندگی کو تشکیل دیتے ہیں۔ روزے کے لیے عربی لفظ کا مطلب ہے “پرہیز کرنا”، نہ صرف کھانے پینے سے بلکہ برے کاموں، خیالات یا الفاظ سے بھی۔

رمضان المبارک کے کھانے اور کھانے میں بنیادی طور پر صحت بخش غذا ہونی چاہیے تاکہ روزے کی حالت میں بھی جسم کی غذائی ضروریات پوری ہوں۔ ایسا کرنے کے لیے، یہ یقینی بنانے کا مشورہ دیا جاتا ہے کہ کھانا ضروری غذائی اجزاء جیسے پروٹین، وٹامنز، کاربوہائیڈریٹس اور معدنیات سے بھرا ہو۔ چونکہ سحری اور افطار کو کافی رزق فراہم کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ پانی پیتے رہنا اور کافی پانی پینا ضروری ہے۔ بالغ افراد کو افطار سے سحری تک فی گھنٹہ دو سے تین گلاس پانی پینا چاہیے۔

:سحری  کے  ٹوٹکے 

 اگرچہ رمضان المبارک کا صبح کا کھانا نسبتاً آسان معاملہ ہے، پھر بھی یہ اتنا صحت بخش ہونا چاہیے کہ روزے کے بقیہ دن تک کافی توانائی فراہم کر سکے۔ رمضان کے دوران ناشتے میں، یہ مشورہ دیا جاتا ہے کہ کافی مقدار میں اور آنے والے دن کے دوران پانی کی مقدار کو پورا رکھنے کے لیے سیال سے بھرپور غذا کا انتخاب کریں۔ اس کے علاوہ، توانائی کی سطح کو بڑھانے کے لیے نشاستہ سے بھرپور کھانا کھانا عقلمندی ہے۔ اناج یا زیادہ فائبر والی خوراک کا انتخاب کرنا ایک اچھا خیال ہے، جو انسان کو پیٹ بھرنے کا احساس دلاتا ہے اور ہاضمے میں معاون ہوتا ہے۔

سحری کے کھانے کے بعد دہی کھانا بہت فائدہ مند ہے کیونکہ یہ آپ کے معدے کو سکون بخشتا ہے اور تیزابیت کو روکنے میں مدد کرتا ہے اور آخر کار آپ کو پانی کی کمی سے بھی بچاتا ہے۔

رمضان کے دوران کھجور کو ترجیح دی جاتی ہے اور یہ روایت رہی ہے کہ انہیں کھانوں میں شامل کیا جائے جیسا کہ تاریخ میں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے کیا تھا۔ سائنسی طور پر کھجور کو اہم سمجھا جاتا ہے۔

اپنے کھانے میں مصالحہ، نمک اور چینی کو کم رکھنے سے آپ کو پیاس نہ لگنے میں مدد مل سکتی ہے۔جب آپ زیادہ نمکین غذائیں کھاتے ہیں، تو آپ کے خلیات سے نکل جاتا ہے، جو بعد میں پیاس لگنے  کا  سبب  بنتا  ہے۔

ہائیڈریٹ رہنے کا ایک آسان اور اہم طریقہ سحری کے دوران کافی پانی پینا ہے۔ تقریباً 2 لیٹر پانی آپ کو گرمیوں کے موسم میں روزے کے دوران پورے دن کے لیے ہائیڈریٹ رکھنے میں مدد دے سکتا ہے۔

پانی سے بھرپور غذائیں جیسے کھیرا، ٹماٹر کا سلاد، اور پھل جیسے تربوز، نارنجی، کیوی وغیرہ کو اپنے سحری کے کھانے میں شامل کرنا آپ کو دن بھر ہائیڈریٹ رکھ سکتا ہے۔

:افطار  کے  ٹوٹکے

اپنے جسم کے سیال اور صحت بخش غذا کو ضرورت سے زیادہ دینے سے گریز کریں۔ پانی کی کمی کو مؤثر طریقے سے روکنے کے لیے تھوڑا سا پانی پی کر پرہیز کریں۔ آپ اپنے جسم ‏میں پانی کی کمی کوپورا کرنے کے لیےلیموں کا رس، آم کا رس یا دودھ بھی منتخب کر سکتے ہیں۔ تاہم، یاد رکھیں کہ بہت زیادہ شوگر اور کیلوریز پر مشتمل مائعات مکمل طور پر بہترنہیں ہیں جب واضح وجوہات کی بنا پر پرہیز کو توڑنے کی بات آتی ہے۔ تو پانی بہترین آپشن ہے۔

کم  پروٹین والی غذائیں آپ کے افطار کے لیے پہلی پسند ہونی چاہئیں کیونکہ پروٹین آپ کے جسم کو جمع کرنے اور طاقت کو بحال کرنے کے ساتھ ساتھ اسے برقرار رکھنے کی اجازت دیتا ہے۔ انڈے بہت زیادہ پروٹین سے بھرپور غذا ہیں۔ انڈے نہ صرف آپ کو زیادہ دیر تک پیٹ بھرے رہنے میں مدد دیتے ہیں بلکہ آپ کے ذائقوں کے مطابق مختلف طریقوں سے بنائے جا سکتے ہیں۔

کھجور کو شوگر کا ایک لازمی ذریعہ کہا جاتا ہے اور اس میں شاندار غذائیت پائی جاتی ہےافطار میں صرف تین کھجور کھاناتقریباً کمزور ہو جانے والی بھوک کی تکلیف کو دور کرنے کے لیے کافی ہے۔

پانی کی کمی سے بچنے کے لیے افطار اور سونے کے وقت کے درمیان زیادہ سے زیادہ پانی یا موسمی پھلوں (آم اور تربوز) کا جوس لیں۔

جسم کو یہ ہضم کرنے میں تقریباً 20 منٹ لگتے ہیں ۔ اس لیے افطار کے دوران کھانے میں زیادہ نہ کھاءیں۔

ایک اور عام غلطی جو لوگ کرتے ہیں وہ یہ ہے کہ افطار کے بعد سونے سے پہلے اپنی بھوک کو مٹانے کے لیے بہت سارے کھانے   کھاتے ہیں۔ وہ اکثر سحری چھوڑ دیتے ہیں اور اگلی افطار تک بھوکے رہتے ہیں۔ سحری کے دوران نہ کھانا یا سونے سے پہلے اتنا کھانا اگلے دن پانی کی کمی اور کم بلڈ شوگر کے مسائل کا سبب بن سکتا ہے۔ اس سے لوگوں کو دن بھر چکر آنے اور پریشانی محسوس ہو سکتی ہے۔ سحری کے دوران ہمیشہ روزہ شروع ہونے سے پہلے کھانے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ کھانا کافی مقدار میں نہ چبانا یا افطار کے دوران کھانے کے فوراً بعد سونا مختلف امراض قلب اور ہاضمہ کا باعث بن سکتا ہے۔ کھانے کو اچھی طرح چبا کر کھانے اور افطار کے بعد چہل قدمی کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

You may also like these